آنکھیں زخمی ہو جائیں گی

آنکھیں زخمی ہو جائیں گی !!!!!!!!!

جب سے تم سے بچھڑ گیا ہوں !!
تب سے آنکھیں کھول رکھی ہیں !!
باتیں ساری تول رکھی ہیں !!
ٹکٹکی باندھے دیکھ رہا ہوں !!
جیسے سارے سِین (Scene) تمہارے !!
روبرو میرے بکھرے ہوئے ہیں !!!
نا میں آنکھیں جھپک رہا ہوں !!
منظر ایک ہی تک رہا ہوں !!
فِیل (Feel) کرو نا درد مرا تم
ہجر تمہارا چیخ رہا ہے !!!
میرے اندر ۔۔۔۔۔۔
میرے باہر ۔۔۔۔۔۔
جسم کے اندر روح کہاں ہے !!!
رہتا ہوں بے جان بدن میں ۔۔۔
لوگ تماشہ دیکھ رہے ہیں !!
جیسے شوخؔ کوئی جوکر ہوں !!
شاید ۔۔۔۔۔۔۔
سارے جان گئے ہیں !!
میں اک پیار کا جوکر ہوں !!
اک شخص سے مجھ کو پیار ہوا تھا !!
پیار بنا پھر ایک تماشہ ۔۔۔
بس وہ ہی ایک تماشہ ہوں میں ۔۔۔
اور حقیقیت کیا ہو گی !!
سب لوگ تماشہ دیکھ رہے ہیں !!
اور انہیں میں ۔۔۔۔
ٹکٹکی باندھے دیکھ رہا ہوں !!
مجھ کو آ کر چُٹکی کاٹو
یہ ہے حقیقت ۔۔۔۔۔۔۔
خواب نہیں ہے !!!
مجھ کو یہ محسوس ہوا ہے !!!
دو چار آنسو رو جائیں گی !!
آنکھیں زخمی ہو جائیں گی !!!!!!!!!!
آنکھیں زخمی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Comments are closed.